"میرا گھر کہاں ہے؟ "

(Mona Shehzad, Calgary)

سمیرا کا دن پھر سسرال والوں سے لعنت ملامت سنتے گزرا تھا. اس کی ساس نندیں اٹھتے بیٹھتے اس کو جتاتیں. بہو یہ تمھارا اور تمہارے ابا کا گھر نہیں ہے. جہاں تم جو چاہو گئی کرو گی.

آج تو معمولی سی بات پر سب نے ایسا بتنگڑ بنایا کہ اس کے ہزار بار معذرت کے باوجود اس کی ساس نندوں کے مزاج درست نہ ہوئے. جیسے جیسے عقیل کے گھر آنے کا وقت ہورہا تھا سمیرا کا دل بیٹھا جارہا تھا ابھی عقیل نے گھر میں قدم ہی رکھا تھا. سمیرا کی ساس نندوں نے ایسا طوفان برپا کیا کہ عقیل اس پر چیل کی طرح جھپٹ پڑا. اس نے سمیرا کی بات سننے کی بھی زحمت نہیں کی. اس کے بال پکڑ کر اس پر تاڑ تاڑ تھپڑوں کی بارش کردی. آج اس کا غضب ہی علیحدہ تھا .جب وہ مار مار کر تھک گیا تو اس نے کہا :
میں نے تمہیں طلاق دی.
میں نے تمہیں طلاق دی.
میں نے تمہیں طلاق دی.

سمیرا لپک کر اس کے پیروں میں گری مگر اس کی دنیا لٹ چکی تھی.

اس کی نند نے اس کا ہاتھ پکڑ کر اس کو دروازے سے باہر نکال دیا. یوں جس گھر میں وہ چھ مھ پہلے شادیانوں کے ساتھ عروسی لباس میں ملبوس، زیورات سے لدی ہوئی آئی تھی.آج اس گھر سے اس کو خالی ہاتھ، طلاق کا داغ دے کر؛ دھکے مار کر نکال دیا گیا تھا. اس کے کان میں اپنی ماں کی آواز گونجی :

"بیٹا ! اپنے گھر جا کر سارے اپنے چھ پورے کرنا. کنواری لڑکیاں اپنے ماں باپ کے گھر ایسے چاو پورے نہیں
کرسکتیں ."

وھ اپنے زخمی بدن اور روح کو گھسیٹتی کیسے اپنے ماں باپ کے گھر پہنچی وھ اس سے بالکل ناواقف تھی. جب اس کو ہوش آیا تو اس کے ماں باپ، بہن بھائی ایسے رو رہے تھے جیسے کوئی مر گیا ہو.اس نے بہت کوشش کی کہ وہ ان کو بتائے کہ وہ ابھی زندہ ہے.

اگلے دن سے اس کے گھر افسوس کرنے والوں کا تانتا بندھ گیا. وھ بظاہر افسوس کرنے آتے مگر اس کے زخم زدہ جسم اور چہرے کو دیکھ کر عورتیں معنی خیز انداز میں مسکراتیں. اس کو اپنی بدکردار ہونے کا طعنہ بھی سننا پڑا .کوئی اس کی بات ماننے پر آمادہ نہ تھا کہ ایک سالن میں نمک تیز ہونے پر اس کی زندگی میں یہ زہر گھول دیا گیا ہے. کوئی اس بات کو سننے یا سمجھنے کے لیے تیار نہیں تھا کہ عقیل کی ماں بہنوں نے اسے سوچے سمجھے منصوبے کے تحت طلاق دلوا کر گھر سے نکالا ہے.اس کی ماں کو اس سے ہمدردی تھی مگر اس کے ابا کو تو ایسے لگتا تھا کہ جیسے وہ اس کو جانتا ہی نہ ہو.بھائیوں اور بھابیوں کے تیور خراب تھے. بہنیں اس سے ہمدردی کرتیں تو ان کو بھی جھاڑ پڑتی. ایسا لگتا تھا جیسے اس کو کوڑھ ہوگیا ہو.اس کا بابل کا گھر پرایا ہوگیا تھا. ہر نظر میں اس کے لیے شک تھا. آج ناعمہ کے سسرال والے آئے اور بغیر کسی وجہ کے انگوٹھی واپس کرکے رشتہ توڑ دیا.
آج زندگی میں پہلی بار اماں نے اس کو مارا اور بار بار کہا؛
تو مر ہی کیوں نہ گئی اپنے گھر میں"
سمیرا ایک دم سے چلائی :
اماں! میرا گھر اس دنیا میں کہاں ہے؟
یہ گھر میرے ابا اور بھائیوں کا ہے وہ گھر عقیل اور اس کی ماں بہنوں کا تھا. میرا گھر کونسا ہے اماں؟
اماں کے ہاتھ رک گئے. باہر سے آتے ابا اور بھائی بھی شرمندگی سے بغلیں جھانک رہے تھے.

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
14 May, 2018 Total Views: 2349 Print Article Print
NEXT 
Reviews & Comments
Parh likh kar achi job pay lagtein,Apna ghar banatein aur phir shadi kartein,Woh hota tumhara ghar beta......Shadi ki itni jaldi bhi kia hei agar uskay paas bhi koi ghar nahin jisay tum apna keh sako ?
By: Manzoor, Lahore on May, 17 2018
Reply Reply
0 Like
je ameen ap ny be comments main bhot acha likha
By: kinza, lahore on May, 17 2018
Reply Reply
0 Like
bhot he kmal lika hain apny mari maa ji be y he khti hain shoq apny gar ja k pory krna fesion wha ja krna apni wish wha pori krna apny gar ja k apny husbnd k sath ma kuch khati nhi mgr etna zarur sochti hu k khas orat ka koi gar hota.Allah sab ki betio k naseeb achy kry ameen
By: kinza, lahore on May, 17 2018
Reply Reply
0 Like
Putter tumhari mom bhi theek kehti hein,Hamari society mein jeena aasaan nahin hei.Jawan beti subeh naha bhi lay tou loagon ko shak par jata hei keh itni subeh kunwari larki kion nahai ? Pakistan mein middle class ki bachion ki tou zindagi jahannum bana kar rakhdi hei hamari society nein.Mera bhi middle class sayhi talluq hei leken meinein apni charon betion ko full freedom are confidence denay ki koshish ki,Khud meray ghar walay is par etraaz kartay thay keh larkian kharaab houjayeingi leken mera tajruba hei keh yehi confidence hi thaa keh sab bachion nein Phd kiya aur duniya kay konay konay mein behtareen uhdon par hein Alhamdolillah.Yaqeen mano,Hamari society bohat hi etraaz karti hei leken if you are strong as parents tou aap apnay bachon ko behtareen zindgi day saktay hein.This is very important that Father stays behind his daughters in any case.Meinein tou apni betion ko yahan tak keh rakha thaa keh agar jawani mein koi galati bhi houjaye tou kisi say dar kar society say kabhi blackmale nahin hona.Insaan say galati bhi hou sakti hei,Always tell me the truth without being afraid.Nateeja bohat hi acha raha.Mein tou apni betion kay saath chupan chupai aur keeri kara bhi khela karta thaa.Betion ko maan say bhi ziyada baap ki hala sheri ki zaroorat hoti hei but i am sorry that our socity demand the fathers to be strict.
By: Manzoor Ahmad Chohan, Lahore on May, 19 2018
0 Like
This is a natural demand and wish of every woman to be married to a gentleman who has his own place to live with him and call this place OUR HOME,Even if it is just a rented room.I had a rented room when i was married in 1972.My children also got married when they could afford thier own place.Marriage is the most wonderfull thing and my mom,My sister and my wife has the same fundamental right to call a place her home but why will my mom give away her right to my wife ? Mom must have her home and her place where she has her husband and feels like a queen,My wife and my sister must also have thier home and thier husbands in a place where they can feel like the queens.Lets give the fundamental human rights to our mom,Sisters and our wife.....Justice is the only practical way to feel like living in a Paradise......I do and all my children too,This is the only decent way of solving all the troubbles with our loved ones.
By: Manzoor Chohan, Lahore on May, 16 2018
Reply Reply
0 Like
(Mona Shehzad, Calgary)
hmm...ap ki tahreer ne dil hila dia ha...log ye bat q nhi sochty kay jese wo kise ki behan beti kay sath kar rahay hain wase hi un ki behan beti kay sath bhi hoga ...khuda ka khoof hona chaeya ase logoun ko...orat ki kadar karne chaeya q kay orat ek maa bhi ha behan bhi ha beti bhi ha biwi bhi ha.ye sub bohat amnol reshty hian maa jesa anmol reshta koi nhi behan jese rehmat barqat ghar main or koi nhi... beti jese rehmat ALLAH ki koi or nhi ...biwi jesa keemti zindagi ka koi sathi nhi .ye sub mukhtalif reshtoun main ALLAH pak ki wo naemat hain jin ka koi mol nhi ha ..ye sub oratian hi hain na...!!!!....pher in ki kadar ase log q nhi karty .......mere ALLAH pak se dua ha ALLAH pak ase logoun ko hidayat ata farmae or reham farmae hum sub per ameen
By: shohaib haneef , karachi on May, 15 2018
Reply Reply
0 Like
جی شعیب صاحب. آمین.
By: Mona Shehzad, Calgary on May, 15 2018
0 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB