رمضان گیم شوز: فہد مصطفیٰ سمیت نو کو توہینِ عدالت کے نوٹس جاری

 

اسلام آباد ہائی کورٹ نے عدالتی حکم کے باوجود ماہِ رمضان میں ٹی وی چینلز پر گیم شوز چلانے پر چینلوں کے سربراہان اور شو کے میزبانوں سمیت نو افراد کو توہینِ عدالت کے نوٹس جاری کر دیے ہیں۔ عدالت نے اے آر وائی کے شو کے میزبان فہد مصطفیٰ، بول ٹی وی پر پروگرام کرنے والے نیبل اور ٹی وی ون پر شو کرنے والے ساحر لودھی کے علاوہ ان چینلز کے سربراہان کو بھی آئندہ سماعت پر ذاتی حیثیت میں پیش ہونے کا حکم دیا ہے۔

نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق اسلام آباد ہائی کورٹ کے جج جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے پیر کو اس ضمن میں دائر کی جانے والی درخواست کی سماعت کی تو درخواست گزار وقاص ملک دلائل دیتے ہوئے کہا کہ عدالتی حکم کے باوجود مختلف ٹی وی چینلوں پر رمضان کے مہینے میں ایسے پروگراموں کا انعقاد کیا جارہا ہے جس میں انعامات دیے جارہے ہیں۔

درخواست گزار کا کہنا تھا کہ عدالت نے حکم دیا تھا کہ نہ صرف ایسے پروگراموں پر تاحکم ثانی پابندی عائد کی جائے بلکہ ان کی جگہ دین اسلام سے متعلق پروگرام نشر کیے جائیں۔

پیمرا کے اہلکار نے عدالت کو بتایا کہ ان کے ادارے نے ان ٹی وی چینلز کے مالکان اور پروگرام کی میزبانی کرنے والے افراد کو نوٹس جاری کیے ہوئے ہیں جو عدالتی حکم کے باوجود انعامی پروگرام چلا رہے ہیں۔

جسٹس شوکت صدیقی نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ عدالتی حکم کی خلاف ورزی کو کسی طور پر بھی برداشت نہیں کیا جائے گا۔ اُنھوں نے کہا کہ ’اینکرز پرسن شاید عدالتی احکامات کو بہت ہلکا لے رہے ہیں۔‘

درخواست گزار کا کہنا تھا کہ پیمرا ان افراد کے خلاف جو کارروائی کرے گی اسے تو بعد میں دیکھا جائے گا پہلے عدالت ان افراد کے خلاف کارروائی کرے جنھوں نے عدالتی حکم کی خلاف ورزی کی ہے۔

اس پر عدالت نے اے آر وائی کے چیف ایگزیکیٹو جرجیس سیجا، ٹی وی چینل جیو کے سی ای او میر ابراہیم، بول ٹی وی کے مالک شعیب شیخ، ٹی وی ون کے چیف ایگزیکیٹو فرخ سید، فلمیزیا کے سی ای او محمد عابد کے علاوہ اداکار نبیل، فہد مصطفیٰ اور ساحر لودھی کو توہین عدالت میں اظہار وجوہ کے نوٹس جاری کر دیے اور اُنھیں 23 مئی کو ذاتی حثیت میں پیش ہونے کا حکم دیا ہے۔

خیال رہے کہ مختلف ٹی وی چینلز نے رمضان کے دوران انعامی پروگرام نشر کرنے پر پابندی سے متعلق عدالتی فیصلے کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں ہی چیلنج کیا ہوا ہے اور ہائی کورٹ کے دو رکنی بینچ نے اس پر فیصلہ محفوظ کر رکھا ہے۔

مختلف ٹی وی چینلز کے مالکان کا مؤقف ہے کہ اظہار رائے کی آزادی اور معلومات تک رسائی ہر شہری کا بنیادی حق ہے اور عدالت عوام کو ان کے اس حق سے محروم نہیں رکھ سکتی۔


Partner Content: BBC URDU

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
20 May, 2018 Total Views: 3049 Print Article Print
NEXT 
Reviews & Comments
Acha yeh bhi typical Pakistani istyle hei keh ham loag har kaam mein Islam ka naam zaroor letay hein,Entertainment eik subject hei aur Islam is entirely a different mindset.Leken kia kijiye hamari hypocracy ka keh Heer mandi bhi jaatay hein tou Islam ko bhi saath layjatay hein,Yeh mein joke nahin kar raha,Sach kehta hoon.....Ab dekha jaye tou Islami asoolon kay mutabiq dekha jaye tou Fahad akelay ko nahin sabhi Ramadaanshow karnay walon ko pakar kar atleast Eid tak tou andar kar dena chahiye kionkeh jo bhi yeh shows wagera hein bilkul bhi Islamic education ki kaswatti par pooray nahin utartay.Khawateen ka naat parhnay ka bhi progiraam hou tou aisi aisi bun sunwar kay aati hein keh Islam mein 4 shadion ki ijazat ka khayaal acha lagnay lagta hei.Pichlay dinon eik naat khan khatoon bohat sa zewar pehen kar aaein aur unki angoothion kay dezine isqadar khoobsoorat thay keh hamari begum sahiba nein dekhtay hi teen angoothion ki firmaesh kardi.Ab hamari eid tou karday gi na bank khali ? Judge sahib iska bhi kuch ilaaj kijiye,Islam mein tou khatoon ki aawaz pay bhi qadgan hei,Chehjaye keh aankhein waankhein khoob bana sunwar kay laakhon madrdon kay saamnay beth jaein.Islami society karna hei tou poori kijiye na,Yeh kia hua keh aadha teeter aur aadha bater ? Tabhi tou meray bachay ham Musalmanon ko jhoota samjhtay hein bas munh say nahin kehtay.
By: Manzoor Ahmad Chohan, Lahore on May, 22 2018
Reply Reply
0 Like
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
Contempt of Court notices have been issued to nine people including game show hosts and channels' heads, after the Ramadan game shows aired on tv despite being barred by Islamabad High Court.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB