عید الفطر یا چھوٹی عید کیسے منائی جائے؟؟

(Muhammad Usama, )

عید الفطر کا دن ہماری زندگی کا سب سے اہم دن ہے اور یہ سال میں ایک بار آتا ہے،اس لئے ہماری کوشش ہو کہ اس مبارک دن کو احکام خداوندی کی پاسداری کرتے ہوئے لہو و لعب سے پاک ہوکر دن گزارے، اہل و عیال کے ضروریات کی چیزوں پر فراخ دلی سے خرچ کریں، نہا دھو کر جو کپڑا سب سے اچھا ہو اسے زیب تن کریں، خوشبو لگائیں، اچھا سے اچھا پہنیں، کھائیں، عزیز و اقارب اور دوست و احباب سے وسیع قلب اور خوش دلی سے ملیں۔

عید کے دن کو حضور پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے بہت متبرک والا دن قرار دیا ہے، حضرت عائشہؓ فرماتی ہیں کہ عید کے دن ہمارے گھر میں کچھ بچیاں جنگ بعاث سے متعلق کچھ اشعار گارہی تھیں، اسی دوران حضرت ابو بکرؓ تشریف لائے اور کہنے لگے کہ اللہ کے رسول کے گھر میں کیا گایا جارہا ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم جو اس وقت ہماری کروٹ لئے ہوئے بیٹھے ہوئے تھے، حضرت ابوبکرؓ کی طرف متوجہ ہوئے اور فرمایا ’’اے ابوبکرؓ! انہیں گانے دو،ہر قوم کے لئے تہوار کا ایک دن ہوتا ہے، آج ہمارے لئے عید کا دن ہے (بخاری:۱/۳۲۴،رقم حدیث:۹۰۹،مسلم:۲/۶۰۷،رقم حدیث:۸۹۲)، دوسری جگہ روایت ہے کہ عید کے دن کچھ حبشی بازی گر کرتب دکھلا رہے تھے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے خود بھی وہ کرتب دیکھے اور حضرت عائشہؓ کو بھی اپنی آڑ میں کھڑا کرکے دکھلائے، جب حضرت عائشہ یہ تماشہ دیکھتے دیکھتے تھک گئیں تو حضور پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا ’’اچھا اب چلو‘‘ (مسلم:۲/۶۰۷،رقم حدیث:۸۹۲)۔

عید الفطر دراصل رمضان المبارک کے مہینہ کی سخت آزمائش اور عبادت و ریاضت کے صلہ میں ملنے والے انعام کا شکریہ ادا کرنے کے خوشی میں منائی جاتی ہے، عید الفطر کا یہ تہوار وسیع پیمانہ پر اخوت و محبت، بھائی چارگی، اتحاد و اتفاق اور میل ملاپ کے جذبات کو جنم دیتی ہے، عید دراصل میں کردار سازی کی دعوت دیتی ہے اور حقوق انسانی کی ادائیگی کا سبق سکھاتی ہے۔ رمضان کے روزے ایک تربیتی نصاب ہیں تزکیۂ نفس کا، اگر مسلمان رمضان شریف کے بعد بھی اوصافِ حمیدہ پر قائم رہیں جن کی اس مقدس مہینہ میں ترغیب دی جاتی ہے تو یہ مثالی انسان بن سکتے ہیں۔

عید الفطر ہمیں حقیقت کی یاد بھی دلاتی ہے کہ انسان کی زندگی کا مقصد ایک ایسے معاشرہ اور سماج کی تشکیل کرنا ہے جس میں انسان محسن بن کر جئے، اسی طرح ہر فرد نہ یہ کہ صرف خود ظاہری اور پاکیزہ ہے بلکہ دوسروں کی زندگی کو بھی اسی طرح پاکیزہ مکمل حسین اور دلکشی بنائے، یا اپنے برادر وطن کی خدمت کرنا اور ان کی ضرورتوں کا خیال رکھنا اپنی خوشیوں میں شامل کرے۔ اسی طرح عید ہمیں دوستوں سے محبت غیروں سے کرم نواز کا سبق دیتی ہے، جس طرح ایک ماہ عبادت و فرماں برداری کے ساتھ اوقات گزارے ہیں، سال کے بقیہ دن بھی اس تقدس و عظمت سے گزاریں گے، یہی عید الفطر کی روح اور یہی اس کا پیغام ہے۔
 

Email
Rate it:
Share Comments Post Comments
13 Jun, 2018 Total Views: 203 Print Article Print
NEXT 
About the Author: Muhammad Usama

Read More Articles by Muhammad Usama: 14 Articles with 2775 views »

Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.
MORE ON ARTICLES
MORE ON HAMARIWEB