انڈیا: قومی ترانے پر کھڑے نہ ہونے پر گرفتاری

12 Jan, 2017 بی بی سی اردو
انڈیا کی ریاست تمل ناڈو کے دارالحکومت چینئی کے بین الاقوامی فلمی میلے کے دوران قومی ترانہ بجنے کے دوران کھڑے نہ ہونے پر تین افراد کو گرفتار کر لیا گيا ہے۔
تھیئٹر

سپریم کورٹ کے حکم کے بعد ملک کے مختلف علاقوں میں اس طرح کے واقعات پیش آ چکے ہیں

انڈیا کی ریاست تمل ناڈو کے دارالحکومت چینئی کے بین الاقوامی فلمی میلے کے دوران قومی ترانہ بجنے کے دوران کھڑے نہ ہونے پر تین افراد کو گرفتار کر لیا گيا ہے۔

گرفتار شدگان میں کالج کی ایک طالبہ اور ان کی ماں بھی شامل ہیں۔

یہ واقعہ شہر کے ایک مال میں واقع تھیئٹر میں پیش آیا جہاں قانون کی طالبہ شريلا، ان کی ماں اور کیرالہ سے آنے والے بجان کے وندو ایک بلغارین فلم 'گلوری' دیکھنے گئے تھے۔

انڈیا کی سپریم کورٹ نے گذشتہ ماہ سینما گھروں میں فلم کی ابتدا سے قبل قومی ترانہ بجانے کی ہدایات دیتے ہوئے سبھی کو اس دوران کھڑے ہونے کے احکامات دیے تھے۔

بہت سے لوگ عدالت کے اس حکم کو درست نہیں مانتے، اس لیے اس کی مخالفت شروع کی تھی اور شریلا اس کے مخالفین میں سے ایک ہیں۔

شریلا کا کہنا تھا: 'ہم پر اعتراض کرنے والے کچھ لوگ مجھ سے اور میری ماں سے تو درخواست کر رہے تھے لیکن ونود کے ساتھ انھوں نے زبردستی کی۔'

سپریم کورٹ

بہت سے لوگ ترانے کے دوران کھڑے ہونے کو درست نہیں مانتے اس لیے اس کی مخالفت شروع کی تھی اور شریلا اس کے مخالفین میں سے ایک ہیں

شريلا اور ونود کے مطابق معاملہ اس وقت شروع ہوا جب کچھ لوگوں نے ترانے کے دوران ان کے نہ کھڑے ہونے پر اعتراض کیا جس کے بعد فلمی میلے کا اہتمام کرنے والے کچھ لوگ آئے اور ان سے باہر نکلنے کو کہا گیا۔

انھوں نے کہا: 'کچھ دیر بعد تین پولیس اہلکار آئے اور ہم تینوں کو تھانے لے کر گئے لیکن کیس درج کرنے کے بعد انھوں نے ہمیں جانے دیا کیونکہ پولیس نے جس دفعہ کے تحت مقدمہ درج کیا تھا اس میں ہمیں تبھی گرفتار کیا جا سکتا تھا جب ہم دوسرے لوگوں کو کھڑے ہونے سے روکتے۔'

شريلا نے بتایا کہ 'میں اصول کے تحت کھڑی نہیں ہوئی کہ قومی ترانے سے حب الوطنی کا جذبہ نہیں جاگتا۔ مجھے سپریم کورٹ کا حکم ظالمانہ اور سفاکانہ لگتا ہے۔'

اس واقعے کے بعد ونود نے بھی بعض ان لوگوں کے خلاف حملہ کرنے کی شکایت درج کروائی جنھوں نے ان کا شناختی کارڈ چھیننے کی کوشش کی اور ان کے ساتھ دھینگا مشتی کی۔

انڈین پرچم

قومی ترانے کے معاملے پر ہی پڑوسی ریاست کیرالہ میں بھی گذشتہ ہفتے ہنگامہ آرائی ہوئی تھی

فلمی میلے کے ڈائریکٹر ای تھنگراج کا کہنا تھا کہ تینوں افراد کو خود پولیس تھیئٹر سے تھانے لے کر گئی تھی اور میلے کا اہتمام کرنے والوں میں سے اس میں کوئی شامل نہیں تھا۔

انھوں نے بتایا کہ انھیں اطلاع ملی ہے کہ ناظرین کے دو دھڑوں کے درمیان گرما گرمی ہوئی تھی۔

قومی ترانے کے معاملے ہی پر پڑوسی ریاست کیرالہ میں بھی گذشتہ ہفتے اس وقت ہنگامہ اٹھ کھڑا ہوا تھا جب ریاست میں بی جے پی کے ایک رہنما اے این رادھا کرشنن نے کیرالہ کی فلم اکیڈمی کے صدر کمل کو ملک سے باہر چلے جانے کے لیے کہا تھا۔

گذشتہ ماہ کیرالہ کے بین الاقوامی فلمی میلے کے دوران کمل نے قومی ترانے کے دوران کچھ لوگوں کے کھڑے نہ ہونے پر انھیں گرفتار کرنے کے لیے آنے والی پولیس کو تھیئٹر میں جانے سے روک دیا تھا۔

سپریم کورٹ کے حکم کے بعد ملک کے مختلف علاقوں میں اس طرح کے واقعات پیش آ چکے ہیں۔ زیادہ تر واقعات میں ایک گروہ دوسرے کو زبردستی کھڑا ہونے پر مجبور کرتا ہے جس کی وجہ سے ہال میں ہنگامہ شروع ہو جاتا ہے۔

Watch Live News

امریکی فوج میں ٹرانس جینڈر افراد کی بھرتی پر پابندی

27 Jul, 2017 وائس آف امریکہ اردو

مسٹرٹرمپ نے بدھ کے روز  ٹوئیٹر پر اپنے تبصروں میں  کہا کہ انہوں نے فوجی ماہرین ا ... مزید

بھارت: سیلابوں میں 119 افراد ہلاک

27 Jul, 2017 وائس آف امریکہ اردو

سرکاری عہدے داروں کا کہنا ہے کہ وہ سیلاب زدہ علاقوں سے 36 ہزار افراد کو نکال چکے ہیں۔بھارت ... مزید

لاپتا پاکستانی سفارت کاروں کو افغان فورسز نے رہا کروا لیا

27 Jul, 2017 وائس آف امریکہ اردو

پاکستانی سفارت کاروں کے اغوا اور أفغان فورسز کی مدد سے ان کی رہائی ایک ایسے موقع پر عمل می ... مزید

زمین کے درجہ حرارت پر کنٹرول کے نئے منصوبے

27 Jul, 2017 وائس آف امریکہ اردو

سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ اگرچہ یہ پراجیکٹ بہت مہنگا ہے لیکن آب و ہوا کی تبدیلی سے متعلق پ ... مزید

مادھوری ڈکشٹ بھی کرکٹر کے عشق میں مبتلا

27 Jul, 2017 نیو

ممبئی: بالی ووڈ کی مایہ ناز اداکارہ مادھوری ڈکشٹ نے بھی ایک کرکٹر کے متعلق اپنے دل کی بات  ... مزید

ترکی روس سے ’ایس 400 میزائل‘ خریدے گا: اردوان

26 Jul, 2017 وائس آف امریکہ اردو

اردوان نے منگل کے روز اپنے پارلیمانی معاونین کو بتایا کہ ’’ہم نے اس معاملے پر (ایس 400 کی  ... مزید

Load More
Post Your Comments
Select Language:    
MORE ON NEWS
MORE ON HAMARIWEB