فوجی عدالتیں قائم رکھنے کیلئے سیاسی اتفاق رائے پیدا کرنا ہوگا، آصف غفور

18 Jan, 2019 سماء نیوز
پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ ( آئی ایس پی آر) کے سربراہ ( ڈی جی) میجر جنرل آصف غفور نے کہا ہے کہ ملٹری کورٹس فوج کی خواہش نہیں بلکہ ملک کی ضرورت ہیں، فوجی عدالتوں کے باعث دہشت گردی کے واقعات میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے، پارلیمنٹ نے توسیع دی تو ملٹری کورٹس کام جاری رکھیں گی اور اس کے لیے سیاسی اتفاق رائے پیدا کرنا ہوگا۔ نجی ٹی وی چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ سول عدالتیں دہشت گردوں کو سزائیں دینے میں ناکام ہوگئی ہیں جبکہ گزشتہ 4 سال کے دوران 717 کیسز ملٹری کورٹس میں آئے جن میں سے 646 کیسز کو منطقی انجام تک پہنچایا گیا اور 345 مجرمان کو سزائے موت سنائی۔ میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ ملٹری کورٹس کا قیام پارلیمنٹ کا متفقہ فیصلہ تھا اور پارلیمنٹ نے ہی فوجی عدالتوں کی مدت میں 2 سال توسیع کی، مزید بھی پارلیمنٹ نے کہا تو فوجی عدالتیں کام جاری رکھیں گی۔ یہ بھی پڑھیں: فوجی عدالتوں میں توسیع، مسلم لیگ ن تقسیمڈی جی آئی ایس پی آر نے کہا کہ کہ فوجی عدالتوں میں ملزمان کو صفائی کا موقع ملتا ہے اور تمام قانونی تقاضے پورے کیے جاتے ہیں۔ سزائے موت کیخلاف مجرم ملٹری کورٹ میں اپیل کرتا ہے، اگر ملٹری کورٹ سے معافی نہ ملے تو اپیل صدر کے پاس جاتی ہے جب کہ کچھ کیسز سول کورٹس میں چلے جاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ فوجی عدالتوں کے مستقبل کا فیصلہ یہ سوچ کر کرنا چاہئے کہ کیا فوجداری نظام مؤثر ہوگیا ہے اور کیا ہمارا فوجداری نظام اب دہشت گردوں سے نمٹ سکے گا۔ یہ بھی پڑھیں: پیپلزپارٹی کا فوجی عدالتوں کی مدت میں توسیع کی مخالفت کا اعلانمیجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ فوجی عدالتوں نے دہشتگردوں اور سہولت کاروں پر خوف طاری کیا۔ پارلیمنٹ نے توسیع دی تو فوجی عدالتیں کام جاری رکھیں گی اور فوجی عدالتیں قائم رکھنے کے لئے سیاسی اتفاق رائے پیدا کرنا ہوگا۔

WATCH LIVE NEWS

Samaa News TV PTV News Live Express News Live 92 NEWS HD LIVE Pakistan TV Channels
 
« مزید خبریں