اک خلش اک کرب پنہاں میری خاکستر میں ہے

Poet: Khawar Rizvi
By: talat, khi

اک خلش اک کرب پنہاں میری خاکستر میں ہے
میرا دشمن حادثہ یہ ہے کہ میرے گھر میں ہے

کون کس کے اشک پونچھے کون کس کا دکھ بٹائے
جو ہے وہ محرومیوں کے گنبد بے در میں ہے

ضرب تیشہ چاہئے اور دست‌ آزر چاہئے
اک جہان خال و خد خوابیدہ ہر پتھر میں ہے

اس زمانے میں مری سادہ دلی میرا خلوص
ایک منظر ہے مگر بے ربط پس منظر میں ہے

بیچ دی خاورؔ یہاں یاروں نے ناموس وفا
تو بھی پیارے کس بھلاوے میں ہے کس چکر میں ہے

Rate it:
12 Nov, 2019

More Khawar Rizvi Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

In the last line Khawar Rizvi used his name as a Takhallus, I like this line and the ability of the poet.

By: waleed, khi on Nov, 12 2019

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City