بازار حسن

Poet: Hazik Ali
By: Hazik Ali, Multan

بازار گرم تھا حسن کا میں نے وہاں بھی تیرا نام لیا
آنکھوں نے پھر قیامت دیکھی میں نے دل تھام لیا

بنا توجہ کا مرکز ہر ایک نشے سے بھری آنکھ کا میں
پوچھ بیٹھے سب، کہاں سے آیا ہے کس نے انتقام لیا

خاموش رہا، کیا کہتا قصور جو سارا خود کا ہی تھا
منہ سے جو نکلا محبت سب نے جینے کا انتظام لیا

دیکھے آکر وہ کہ غیر موجودگی میں بھی غالب ر ہا
آنسو گرتے رہے میرے، دردوں نے جھک کہ سلام لیا

حازق عشق سچا ہو تو کامل بھی ہو ہی جاتا ہے آخر
حیران ہوں ، سب نے اس کے نام کے بعد میرا نام لیا

Rate it:
18 Sep, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Hazik Ali
Visit 9 Other Poetries by Hazik Ali »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City