جانے کہاں کہاں سے بلایا گیا ہوں میں

Poet: راشد علی مرکھیانی
By: Rashid Ali Markhiani, Larkana

جانے کہاں کہاں سے بلایا گیا ہوں میں
تب آئینے کے سامنے پایا گیا ہوں میں

دو چار پل حیات کے دوچار تھے مجھے
اک عمر بے دلی سے نبھایا گیا ہوں میں

دیوار و در سے پھوٹتی رہتی ہے تیرگی
یعنی دیے کے ساتھ بجھایا گیا ہوں میں؟

تم کو کہیں دکھوں تو بلانا ضرور تم
جانے کہاں ہوں! کس کو تھمایا گیا ہوں میں

پہلے تو خوب خواب دکھائے گئے مجھے
تعبیر پاس تھی تو جگایا گیا ہوں میں

چھوٹی سی ایک بھول تھی اتنی سزا نہ دے
آیا نہیں زمین پہ! لایا گیا ہوں میں

تجھ پر نظر پڑی تو کھلا زندگی کا راز
راشد ترے لیے تو بنایا گیا ہوں میں
 

Rate it:
16 Nov, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Rashid Ali Markhiani
Visit Other Poetries by Rashid Ali Markhiani »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City