جس کی سوندھی سوندھی خوشبو آنگن آنگن پلتی تھی

Poet: Hammad Niyazi
By: farhan, khi

جس کی سوندھی سوندھی خوشبو آنگن آنگن پلتی تھی
اس مٹی کا بوجھ اٹھاتے جسم کی مٹی گلتی تھی

جس کو تاپ کے گرم لحافوں میں بچے سو جاتے تھے
دل کے چولھے میں ہر دم وہ آگ برابر جلتی تھی

گرم دوپہروں میں جلتے صحنوں میں جھاڑو دیتے تھے
جن بوڑھے ہاتھوں سے پک کر روٹی پھول میں ڈھلتی تھی

کسی کہانی میں ویرانی میں جب دل گھبراتا تھا
کسی عزیز دعا کی خوشبو ساتھ ہمارے چلتی تھی

گرد اڑاتے زرد بگولے در پر دستک دیتے تھے
اور خستہ دیواروں کی پل بھر میں شکل بدلتی تھی

خشک کھجور کے پتوں سے جب نیند کا بستر سجتا تھا
خواب نگر کی شہزادی گلیوں میں آن نکلتی تھی

دن آتا تھا اور سینے میں شام کا خاکہ بنتا تھا
شام آتی تھی اور جسموں میں شام بھی آخر ڈھلتی تھی

Rate it:
28 Nov, 2019

More Hammad Niyazi Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City