وہ سب فریب ہے جو کچھ بھی اختیار میں ہے
Poet: Naveed Jaffri
By: Syed Abdul Lateef, Dubai-UAE

یہ میری ذات تیرے لطف کے حصار میں ہے
ثبوت ہے یہ تپش دل کے جو شرار میں ہے

تمہارا بندہ مجبور کس شمار میں ہے
وہ سب فریب ہے جو کچھ بھی اختیار میں ہے

ادھر اجل تو بلانے کے انتظار میں ہے
ادھر حیات ہے کہ ہستی کے اعتبار میں ہے

یہی تو اہل چمن آج تک سمجھ نہ سکے
کہ آج بھی یہ چمن کس کے اختیار میں ہے

کسی کے آگے وہ مجبور رہ نہی سکتا
وہ ذی شعور تمہارے جو اختیار میں ہے

وہ مجھ کو بھول بھی جائیں تو کیا گلہ ہے نوید
میں اس کو یاد کروں یہ تو اختیار میں ہے

Rate it: Views: 584 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More General Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 11 Feb, 2010
About the Author: Syed Abdul Lateef (Naveed Jaffri)

Visit 15 Other Poetries by Syed Abdul Lateef (Naveed Jaffri) »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
بہت عمدہ ۔ الله کر ے زور قلم اور زیادھ
By: Syed Mubarak Shah, U.A.E. on May, 27 2013
Reply Reply to this Comment
واہ جعفری صاحب کیا بات ہے! بہت ہی خوبصورت حمد ہے جزاک الله
سارہ جعفری کنیڈہ
By: Sarah Jaffery, Toronto on Mar, 07 2011
Reply Reply to this Comment
واہ کیا بات ہے جعفری صاحب اس مرصع غزل میں آپ نے حمد کے کیا کیا مضامین لائیں ہیں جزاک الله
By: Azeem Khan, Hyderabad India on Feb, 13 2010
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.