ذکر ہوتا ہے جہاں بھی مرے افسانے کا
Poet: Gulzar
By: Waseem, khi

ذکر ہوتا ہے جہاں بھی مرے افسانے کا
ایک دروازہ سا کھلتا ہے کتب خانے کا

ایک سناٹا دبے پاؤں گیا ہو جیسے
دل سے اک خوف سا گزرا ہے بچھڑ جانے کا

بلبلہ پھر سے چلا پانی میں غوطے کھانے
نہ سمجھنے کا اسے وقت نہ سمجھانے کا

میں نے الفاظ تو بیجوں کی طرح چھانٹ دیئے
ایسا میٹھا ترا انداز تھا فرمانے کا

کس کو روکے کوئی رستے میں کہاں بات کرے
نہ تو آنے کی خبر ہے نہ پتا جانے کا

Rate it: Views: 42 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 09 Jan, 2017
About the Author: owais mirza

Visit Other Poetries by owais mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Love the poetry of Gulzar, he is the poet of the love, in Afsana Nigari we never denied his services for Urdu literature. Here I am happy to land only due to the Ghazalz of Gulzar.
By: neelam, hyderabad on Jan, 12 2019
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.