سانحہ مستونگ
Poet: مونا شہزاد
By: Mona Shehzad, Calgary

سنا ہے آج کل سورج بہت گریزاں ہے
مستونگ کے آنگنوں میں جھانکنے سے حد درجے لرزاں ہے
کہتا ہے عجب خون کی بو ہے پھیلی
یہ کیسی خدائی ہے؟
جہاں پر صرف موت کی حکمرانی ہے
یہ جو بین کرتی مائیں ہیں
کیا ان کی تڑپ صرف مجھے جلاتی ہے ؟
اے قاضی شہر! کب ان درندوں تک تیری رسائی ہوگئی؟
یا آب شہر پر بھیڑیوں کی حکمرانی ہوگئی؟

Rate it: Views: 4 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 14 Jul, 2018
About the Author: Mona Shehzad

I used to write with my maiden name during my student life. After marriage we came to Canada, I got occupied in making and bringing up of my family. .. View More

Visit 107 Other Poetries by Mona Shehzad »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.