لہجہ

Poet: سید ضمیر کاظمی
By: Syed Zameer Kazmi, Sialkot

لباس مختصر ہو چکا ہے
برہنہ معتبر ہو چکا ہے

جو کام نا ممکن تھا
کچھ لے کر لو چکا ہے

آپ دیر سے آئے ہیں
اُن کا ذکر ہو چکا ہے

پہلے میرا دل تھا جو
اب انکا گھر ہو چکا ہے

جنوری میں ملاقات ہوئی تھی
دیکھ دسمبر ہو چکا ہے

تیرے فراق سے ڈرنے والا
اب بے خطر ہو چکا ہے

ہولے ہولے تیرا لہجہ
شکر سے خنجر ہو چکا ہے

اب تھجے پیش ہونا ہے
ضمیر حیدر ہو چکا ہے۔

Rate it:
06 Nov, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Zameer Kazmi
Visit 12 Other Poetries by Syed Zameer Kazmi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City