نہ رہے اُٹھنے کے قابل کہ سنبھل بھی جاتے
Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

نہ رہے اُٹھنے کے قابل کہ سنبھل بھی جاتے
نہ رہا زرا سا امکان کہ بدل بھی جاتے

احساسات کا ذخیرہ ہے جان کے ساتھ
ہوتے مٹی کی مورت صرف تو بہل بھی جاتے

ہم اپنی خوشیاں تجھ پر نچھاور کر دیتے
رہتے اجالے شام کے سائے گر ڈھل بھی جاتے

تم دیتے تو سہی اجازتِ محبت اِک بار
کیا مجال تھی کرتے اُف گر جل بھی جاتے

تم تو بنے رہے عمر بھر پتھر کے پتھر
ہاں! انسان ہوتے تو پگھل بھی جاتے

ہم کریں ختمِ محبت بھی تو بھلا کیسے
مر جاتے گر تم خانۂ دل سے نکل بھی جاتے

Rate it: Views: 4 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 06 Nov, 2018
About the Author: sobiya Anmol

what can I say,people can tell about me... View More

Visit 112 Other Poetries by sobiya Anmol »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.