بوجھ اٹھایا نہیں گیا
Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

نغمہ وہ پیار کا کبھی گایا نہیں گیا
دل کا بھی حال اپنا سنایا نہیں گیا

مرنے کے بعد بھی مجھے کاندھا نہیں دیا
تم سے ذرا سا بوجھ اٹھایا نہیں گیا

حالت پہ میری تو مرے دشمن بھی رو پڑے
تم سے تو ایک آنسو بہایا نہیں گیا

سب کچھ بھلا دیا ہے ترے واسطے مگر
اس دل سے تیرا نام مٹایا نہیں گیا

اجڑے ہیں اس طرح مرے سپنوں کے سلسلے
آنکھوں میں کوئی خواب سجایا نہیں گیا

دیتے ہیں واسطے مجھے وہ ہاتھ جوڑ کر
جن سے ہمارا راز چھپایا نہیں گیا

وعدوں کو اپنے سارے وہ یکسر بھلا گیا
اک لمحے کو بھی ہم سے بھلایا نہیں گیا
 

Rate it: Views: 14 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More General Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 15 Dec, 2018
About the Author: Muhammad Arshad Qureshi

My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More

Visit 157 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.