پرانا مکان
Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

ملتا نہیں مجھے سکوں سارے جہان میں
کتنا سکون تھا مرے کچے مکان میں

ہاں گونجتے تھے قہقہے ہر پل وہیں پہ اب
آواز سسکیوں کی ہے خالی مکان میں

وہ بھی نبھا سکے نہ یہاں ساتھ پھر مرا
پڑھتے تھے ہم قصیدے یہاں جس کی شان میں

آخر کو گر پڑے ہیں پھر اپنی زمین پر
کیا فائدہ ہوا ہمیں ایسی اڑان میں

کیسے میں بھول جاؤں اسے میرے دوستو
بچپن مرا ہے گذرا پرانے مکان میں

ہر چیز پر لگے ہیں نشاں ماں کے ہاتھ کے
کیسے میں پھینک دوں انہیں یوں خاک دان میں
 

Rate it: Views: 20 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More General Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 18 Jan, 2019
About the Author: Muhammad Arshad Qureshi

My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More

Visit 157 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.