قتل عاشق کسی معشوق سے کچھ دور نہ تھا
Poet: Khwaja Mir Dard
By: Mariam, khi

قتل عاشق کسی معشوق سے کچھ دور نہ تھا
پر ترے عہد سے آگے تو یہ دستور نہ تھا

رات مجلس میں ترے حسن کے شعلے کے حضور
شمع کے منہ پہ جو دیکھا تو کہیں نور نہ تھا

ذکر میرا ہی وہ کرتا تھا صریحاً لیکن
میں نے پوچھا تو کہا خیر یہ مذکور نہ تھا

باوجودے کہ پر و بال نہ تھے آدم کے
وہاں پہنچا کہ فرشتے کا بھی مقدور نہ تھا

پرورش غم کی ترے یاں تئیں تو کی دیکھا
کوئی بھی داغ تھا سینے میں کہ ناسور نہ تھا

محتسب آج تو مے خانے میں تیرے ہاتھوں
دل نہ تھا کوئی کہ شیشے کی طرح چور نہ تھا

دردؔ کے ملنے سے اے یار برا کیوں مانا
اس کو کچھ اور سوا دید کے منظور نہ تھا

 

Rate it: Views: 21 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More Khwaja Mir Dard Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 22 Jan, 2019
About the Author: Owais Mirza

Visit Other Poetries by Owais Mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
On this poetry by Khwaja Mir Dard, the poet was in love. Every lines and every single words by the poet is full to express the feelings of the poet. He wrote many Ghazal but this 'Qatal Aashiq Kisi' is my favorite.
By: nida, khi on Jan, 25 2019
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.