اچھا ہوا کہ میرا نشہ بھی اتر گیا
Poet: Munawwar Rana
By: badar, khi

اچھا ہوا کہ میرا نشہ بھی اتر گیا
تیری کلائی سے یہ کڑا بھی اتر گیا

وہ مطمئن بہت ہے مرا ساتھ چھوڑ کر
میں بھی ہوں خوش کہ قرض مرا بھی اتر گیا

رخصت کا وقت ہے یوں ہی چہرہ کھلا رہے
میں ٹوٹ جاؤں گا جو ذرا بھی اتر گیا

بیکس کی آرزو میں پریشاں ہے زندگی
اب تو فصیل جاں سے دیا بھی اتر گیا

رو دھو کے وہ بھی ہو گیا خاموش ایک روز
دو چار دن میں رنگ حنا بھی اتر گیا

پانی میں وہ کشش ہے کہ اللہ کی پناہ
رسی کا ہاتھ تھامے گھڑا بھی اتر گیا

وہ مفلسی کے دن بھی گزارے ہیں میں نے جب
چولھے سے خالی ہاتھ توا بھی اتر گیا

سچ بولنے میں نشہ کئی بوتلوں کا تھا
بس یہ ہوا کہ میرا گلا بھی اتر گیا

پہلے بھی بے لباس تھے اتنے مگر نہ تھے
اب جسم سے لباس حیا بھی اتر گیا

Rate it: Views: 27 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More Munawwar Rana Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 22 Jan, 2019
About the Author: Owais Mirza

Visit Other Poetries by Owais Mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
'Wo Mutaen Buhut Hai Mera Sath Chor Kar' , the line by Munawwar Rana make me emotional because this line is totally set for my current feelings, his poetry is very near to the heart of the lover.
By: jaffar, khi on Jan, 25 2019
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.