جنگل سے آگے نکل گیا

Poet: Rais Farogh
By: salam, khi

جنگل سے آگے نکل گیا
وہ دریا کتنا بدل گیا

کل میرے لہو کی رم جھم میں
سورج کا پہیا پھسل گیا

چہروں کی ندی بہتی ہے مگر
وہ لہر گئی وہ کنول گیا

اک پیڑ ہوا کے ساتھ چلا
پھر گرتے گرتے سنبھل گیا

اک آنگن پہلے چھینٹے میں
بادل سے اونچا اچھل گیا

اک اندھا جھونکا آیا تھا
اک عید کا جوڑا مسل گیا

اک سانولی چھت کے گرنے سے
اک پاگل سایہ کچل گیا

ہم دور تلک جا سکتے تھے
تو بیٹھے بیٹھے بہل گیا

جھوٹی ہو کہ سچی آگ تری
میرا پتھر تو پگھل گیا

مٹی کے کھلونے لینے کو
میں بالک بن کے مچل گیا

گھر میں تو ذرا جھانکا بھی نہیں
اور نام کی تختی بدل گیا

سب کے لیے ایک ہی رستہ ہے
ہیڈیگر سے آگے رسل گیا

Rate it:
12 Apr, 2019

More Rais Farogh Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City