تمہاری قبر پر

Poet: Nida Fazli
By: jahangir, khi

تمہاری قبر پر
میں فاتحہ پڑھنے نہیں آیا
مجھے معلوم تھا
تم مر نہیں سکتے
تمہاری موت کی سچی خبر جس نے اڑائی تھی

وہ جھوٹا تھا
وہ تم کب تھے

کوئی سوکھا ہوا پتہ ہوا سے مل کے ٹوٹا تھا
مری آنکھیں

تمہارے منظروں میں قید ہیں اب تک
میں جو بھی دیکھتا ہوں

سوچتا ہوں
وہ وہی ہے

جو تمہاری نیک نامی اور بد نامی کی دنیا تھی
کہیں کچھ بھی نہیں بدلا

تمہارے ہاتھ میری انگلیوں میں سانس لیتے ہیں
میں لکھنے کے لیے

جب بھی قلم کاغذ اٹھاتا ہوں
تمہیں بیٹھا ہوا میں اپنی ہی کرسی میں پاتا ہوں

بدن میں میرے جتنا بھی لہو ہے
وہ تمہاری

لغزشوں ناکامیوں کے ساتھ بہتا ہے
مری آواز میں چھپ کر

تمہارا ذہن رہتا ہے
مری بیماریوں میں تم

مری لاچاریوں میں تم
تمہاری قبر پر جس نے تمہارا نام لکھا ہے

وہ جھوٹا ہے
تمہاری قبر میں میں دفن ہوں

تم مجھ میں زندہ ہو
کبھی فرصت ملے تو فاتحہ پڑھنے چلے آنا

Rate it:
12 Jun, 2019

More Father Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City