دیکھا ہے
Poet: Nowsherwan Anjum
By: Nowsherwan Anjum, Jhelum

دلوں سے اٹھتا ہوا اک طوفان دیکھا ہے
جہاں بکتے تھے بدن اب ایمان دیکھا ہے

خزاں کا موسم پھر چمن میں نہیں لوٹا کہ
بہاروں میں اس نے اجڑتا گلستان دیکھا ہے

اپنے شہر کے حالات کی جن کو نہیں خبر
دعویٰ ہے ان کا ہم نے اک جہان دیکھا ہے

پھولوں کا ہار پہن کے مسکرانے والوں نے
کہاں کانٹوں میں الجھا کسی کا گریبان دیکھا ہے

کل پھر مہندی کی آرزو لئے جو مر جائے گی
ایسی ہی اک لڑکی کو میں نے جوان دیکھا ہے

Rate it: Views: 8910 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 02 Apr, 2008
About the Author: Nowsherwan Anjum


Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
بات میری اشاروں میں ھوئی تھی
رات ساری ستاروں میں کٹ گئی

غربت کی قتاروں میں عمربھرتھاعادل
زندگی بچوں کی بہاروں میں کٹ گئ
By: adil siddeeqi , Riyadh on Apr, 22 2017
Reply Reply to this Comment
zbrdst
By: huma khani, kohat on Jan, 17 2017
Reply Reply to this Comment
zbrdst
By: huma khani, kohat on Jan, 17 2017
Reply Reply to this Comment
Wah ji wah Nowsherwan kia khoob kha ap nay is shiyi main
By: Muhammad Faisal , Gujranwala on Feb, 25 2011
Reply Reply to this Comment
awesum
By: guria, rwp on Dec, 19 2010
Reply Reply to this Comment
i like the style of touching heart
By: Fateh Muhammaad, Lahore on Dec, 18 2009
Reply Reply to this Comment
Hi,"Dilon se utha howa eik tufan daihka heh"
By: Sumera Khan, Taxila on Apr, 03 2008
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.