داستانِ جرم
Poet: ارشد ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

داستانِ جرم لکھنے جب لکھاری نکلے
کرتے تھے تلاش کوئی خطاء ہماری نکلے

انتہا ہوگی ہماری یہ سمجھ لینا تم
جب کبھی دل سے مرے آہ تمہاری نکلے

کاش کے مجھ کو بھی ساتھ بٹھایا ہوتا
پھر بتاتے کہ کیوں ہم محفل سے تمہاری نکلے

ایک مدت سے ملاقات نہیں ہے اس سے
اب جو مل جائے تو پھر جاں ہماری نکلے


زندگی اب یوں ہی تڑپاتی رہے گی ارشیؔ
جب تلک جسم سے نہ جان تمہاری نکلے
 

Rate it: Views: 16 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 19 Dec, 2017
About the Author: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi)

My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More

Visit 61 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.