ایک بے تکی سی غزل
Poet: Shaikh Khalid Zahid
By: Shaikh Khalid Zahid, Karachi

 جاں پھر جان جاں پھر جان جاناں کی روائت چھوڑ دی ہے
بس یوں سمجھ لیجئےکہ محبت کرنا چھوڑ دی ہے

حاضری تو سارے خدائوں کے حضور ہوتی ہیں
سجدے تو سب کرتے ہیں، عبادت کرنا چھوڑ دی ہے

مونٹیسری ڈے کئیر سینٹر پرورش کے ذمہ دار ہیں
بزرگوں کی صحبت ترک نہیں کی بس چھوڑ دی ہے

آپ جناب جیسے الفاظ اجنبی سے ہوگئے ہیں
جب سے ادب نے بات کرنا چھوڑ دی ہے

ہر ایک دستیاب ہے اب سوشل میڈیا پر
لوگوں نے بلمشافہ ملاقات چھوڑ دی ہے

کسی بات سے دل آزاری نا ہوجائےخالد
ہم نے گفتگو طویل کرنا چھوڑ دی ہے

Rate it: Views: 41 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 01 Jan, 2018
About the Author: Sh. Khalid Zahid

Take good care of others who live near you specially... View More

Visit 43 Other Poetries by Sh. Khalid Zahid »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.