احساس ہو تو لوٹ آنا!!!
Poet: سیدہ سعدیہ عنبر جیلانی
By: سیدہ سعدیہ عنبر جیلانی, فیصل آباد، پنجاب، پاکستان

انجان رستوں پہ چل رہے ہو تھک چکو تو لوٹ آنا
یہ بے وفائی جو کر رہے ہو احساس ہو تو لوٹ آنا

محبتوں کو، وفاؤں کو اچھا نہیں ہے آزمانا اتنا
کسی دل کو جو ستانا چاہو ستا چکو تو لوٹ آنا

جب تمہیں بھی یاد آۓ اور بے بسی سے رو پڑو تم
کسی کے کندھے پہ سر رکھ کے رونا چاہو تو لوٹ آنا

محبتوں میں فصیل کیسی عشق میں اناء ہے کیا
خاموش نگاہوں کی التجاء کو سمجھ سکو تو لوٹ آنا

زندگی کے اس سفر میں، بہار رت کی چاہتوں میں
اداس رت میں ویران رستوں پہ بکھرنے لگو تو لوٹ آنا

اپنے جب سیراب ٹھہریں، درد جب عذاب ٹھہریں
بے بسی سے کبھی جو تم بھی دعائیں مانگو تو لوٹ آنا

کوئی دل ء ویران عنبر منتظر ہے اسی جگہ پر
بچھڑتے وقت کی آواز کو جو تم سنو تو لوٹ آنا

Rate it: Views: 21 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 10 Feb, 2018
About the Author: سیدہ سعدیہ عنبر جیلانی

Visit 727 Other Poetries by سیدہ سعدیہ عنبر جیلانی »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.