بقا کا سفر
Poet: مونا شہزاد
By: Mona Shehzad, Calgary

حضرت انسان جو کرنا ہے بقا کا سفر
کر خود کو عاری فنا کے ڈر سے
کر لے یاری علم و ادب سے
ہوجائے گی بهاری تیری سواری
یہ گیسوئے محبوب کی چهاوں چھوڑ دے.کر لے حب فن و ہنر سے
گزر گئی عمر ساری اسی صحرا کی خاک چھانتے
اب تو جاگ جا اور جی لے زندگی
قطرہ قطرہ مت ترس
دریا کو کوزے میں بند کر کے پی لے
حضرت انسان جو کرنا ہے بقا کا سفر
کر خود کو عاری فنا کے ڈر سے

Rate it: Views: 2 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 07 Mar, 2018
About the Author: Mona Shehzad

I used to write with my maiden name during my student life. After marriage we came to Canada, I got occupied in making and bringing up of my family. .. View More

Visit 104 Other Poetries by Mona Shehzad »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.