شکوہ چاند
Poet: مونا شہزاد
By: Mona Shehzad, Calgary

کل تهی ملاقات میری چاند کے ساتھ
تها وہ اداس اک ملال کے ساتھ
سناتا رہا وہ اپنی داستان زیاں
ہوتی رہی میری آنکھ نم بار بار
نہ نکلے دو لفظ دلاسے کے ان لبوں سے میرے
آتی رہی شرم مجھے انسانیت سے بار بار
کیا کہتی اسے کہ یہاں قاتل بھی ہم
مقتول بھی ہم
کس کس کے ہاتھ پر لہو اپنا معصوم ڈھونڈوں میں بار بار
ہر اک دامن میں ہے نیہاں کسی کی لاش
بیتتی رہی مجھ میں انتشار کی رات
کل تهی ملاقات میری چاند کے ساتھ

Rate it: Views: 2 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 13 Apr, 2018
About the Author: Mona Shehzad

I used to write with my maiden name during my student life. After marriage we came to Canada, I got occupied in making and bringing up of my family. .. View More

Visit 94 Other Poetries by Mona Shehzad »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.