غمزہ نہیں ہوتا کہ اشارا نہیں ہوتا
Poet: Akbar Allahabadi
By: nida, khi

غمزہ نہیں ہوتا کہ اشارا نہیں ہوتا
آنکھ ان سے جو ملتی ہے تو کیا کیا نہیں ہوتا

جلوہ نہ ہو معنی کا تو صورت کا اثر کیا
بلبل گل تصویر کا شیدا نہیں ہوتا

اللہ بچائے مرض عشق سے دل کو
سنتے ہیں کہ یہ عارضہ اچھا نہیں ہوتا

تشبیہ ترے چہرے کو کیا دوں گل تر سے
ہوتا ہے شگفتہ مگر اتنا نہیں ہوتا

میں نزع میں ہوں آئیں تو احسان ہے ان کا
لیکن یہ سمجھ لیں کہ تماشا نہیں ہوتا

ہم آہ بھی کرتے ہیں تو ہو جاتے ہیں بدنام
وہ قتل بھی کرتے ہیں تو چرچا نہیں ہوتا

Rate it: Views: 18 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 14 Apr, 2018
About the Author: Owais Mirza

Visit Other Poetries by Owais Mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Akbar Allahabadi was not a professional poet but he wrote few Ghazalz in which he shows that he had a talent to wrote both love and sad ghazalz, this ghazal is the great example of his poetry.
By: zia, khi on Apr, 27 2018
Reply Reply to this Comment
The third stanza of of 'Ghamza Nahi Hota' poetry by Akbar Allahabadi gives the great message to avoid love because it is quiet hard and difficult to face the breakup in love.
By: vaneeza, khi on Apr, 14 2018
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.