وہ مسکرا کے اگر ہمکلام ہو جائیں
Poet: داد بلوچ فورٹ منرو
By: Dad Baloch, ڈیرہ غازی خان

وہ مسکرا کے اگر ہمکلام ہو جائیں
تو سارے زیست کے دکھڑے تمام ہو جائیں

یہ سوچ کے نہیں جاتا کسی بھی محفل میں
کہ راز سارے محبت کے عام ہو جائیں

خدا کرے کوئی توہمت نہ تجھ کو چھو پائے
جو درد و غم ہیں تیرے میرے نام ہو جائیں

میں ایک شہر محبت نیا بساؤں گا
جو اہل دل ہیں جنوں کے غلام ہو جائیں

میں دادؔ چھوڑ چکا مے کدے کے رستے کو
میں کیا کروں تیری آنکھیں جو جام ہو جائیں

Rate it: Views: 3 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 17 Apr, 2018
About the Author: Dad Baloch

Visit 15 Other Poetries by Dad Baloch »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.