ترے خیال میں کیسی یہ بے خیالی ہے
Poet: مسعود محمود خان
By: Masood Mehmood Khan, Perth, Australia

تیرے خیال میں کیسی یہ بے خیالی ہے
نشے میں جھوم رہاہوں گو جام خالی ہے

یہ آزمائشِ جاں کا عجب تسلسل ہے
کہ دل گریزاں ہے لیکن نظر سوالی ہے

ٹہر ٹہر کے دھڑکتا ہے ایک عرصہ سے
کسی کی عادتِ گفتار دل نے ڈالی ہے

ہمارے عصر کی کیسی یہ بدنصیبی ہے
رسن ہوئی ہے بوسیدہ صلیب خالی ہے

تری گلی سے اٹھائے گا کون اب ہم کو
تری گلی میں لحد ہم نے اب بنالی ہے

نظام دید بشر میں ہے نقص کچھ پنہاں
کہ جو نظر بھی ملے وہ نظر سوالی ہے

رنگِ گلاب رنگِ گل رنگِ شباب نہ دیکھ
تمام رنگوں سے بر تر حیا کی لا لی ہے

یہ کیسا میل ہے بینِ چراغ و تاریکی
سحر جو آئی مقابل سپرد ڈالی ہے

کرم کادر ہواوا اس طرح سے مسعود ہم پر
دعا کولب نہ ہلائے مراد پالی ہے

Rate it: Views: 2 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 20 May, 2018
About the Author: Masood Mehmood Khan

Visit 41 Other Poetries by Masood Mehmood Khan »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.