تقدیر آزمانے کی زہمت نہ کیجیے
Poet: Tasdiq Ahmed Khan
By: Tasdiq Ahmed Khan , Ajmer

تقدیر آزمانے کی زہمت نہ کیجیے
اس بے وفا کو پانے کی حسرت نہ کیجیے

بیٹھا ہےچوٹ کھا کھاحسینوں سےدلپہ وہ
جو کہ رہا تھا ہم سے محبت نہ کیجیے

جلوے کی حسین کے آیا ہوں دیکھ کر
محفل میں آج ذکر َ قیامت نہ کیجیے

آواز تو اٹھا ءیے حق کے لیے مگر
اس کے لئے وطن میں بغاوت نہ کیجیے

میں ہوں سخن طراز قلم بیچتا نہیں
دولت کی مجھ پہ آپ عنایت نہ کیجیے

مفلس کے گھر ہی لٹتے ہیں اکثر فساد میں
اخبار پڑھ کے آج کا حیرت نہ کیجیے

رسمَ وفا نبھاءیے تصدیق آپ بھی
کھا کر فریب َحسن شکایت نہ کیجیے

Rate it: Views: 2 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 12 Jun, 2018
About the Author: Tasdiq Ahmed Khan

Visit 13 Other Poetries by Tasdiq Ahmed Khan »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.