دل کی دھڑکن کہ جاں سے آتی ہے
Poet: نصیر الدین نصیر
By: muhammad zubair, Chichawatni

دل کی دھڑکن کہ جاں سے آتی ہے
اُن کی خوشبو ، کہاں سے آتی ہے

حدِ اوہام سے گزر کے کُھلا
خوش یقینی ،گُماں سے آتی ہے

جراتِ بندگیِ ربِ جلیل
بت شکن کی اذاں سے آتی ہے

ایسی طاقت کہ جو نہ ہو تسخیر
دل میں عزمِ جواں سے آتی ہے

اُن کی آواز میرے کانوں میں
آرہی ہے ، جہاں سے آتی ہے

سر کو توفیق سجدہ کرنے کی
یار کے آستاں سے آتی ہے

آدمیت وہاں نہیں ہوتی
کبر کی بُو جہاں سے آتی ہے

وقت کیسا قیامتی ہے آج
دھوپ اب سائباں سے آتی ہے

رات پڑتے ہی کچھ نہیں کُھلتا
یادِ جاناں کہاں سے آتی ہے

آدمی میں جمالیاتی حس
قربتِ مہ وشاں سے آتی ہے

دو قدم چل کے تم نہیں آتے
چاندنی آسماں سے آتی ہے

زندگی میں نصیر ! آسانی
ترکِ سُود و زیاں‌ سے آتی ہے

یاد فن کے اساتذہ کی نصیر
تیرے طرزِ بیاں سے آتی ہے

Rate it: Views: 7 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 18 Jul, 2018
About the Author: muhammad zubair

Visit 16 Other Poetries by muhammad zubair »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Excellent
good luck and stay blessed
By: uzma, Lahore on Jul, 19 2018
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.