ضبط غم کے بحر میں ڈوبا ہوا
Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

ضبط غم کے بحر میں ڈوبا ہوا
خامشی سے ہر ستم سہتا ہوا

ہوش میں کچھ بھی کہا جاتا نہیں
بے خودی میں مدعا کہتا ہوا

منتظر ہیں اب سزا کے ہم تری
جھوٹ کی دنیا میں سچ کیا ہوا

آشنا دنیا سے کچھ ایسے ہوئے
خود سے بھی ہم اجنبی رہتا ہوا

ہم نے بھی زخموں سے کر لی دوستی
جسم پر سب زخم اب پیدا ہوا

اب جفاؤں کا نہیں ہے ڈر ہمیں
ہم وفا کی داستاں سے جلتا ہوا

تیرے بخشے غم سبھی وشمہ یہاں
درد بن کر آنکھ سے بہتا ہوا

Rate it: Views: 1 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 12 Sep, 2018
About the Author: washma khan washma

I am honest loyal.. View More

Visit 4383 Other Poetries by washma khan washma »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.