آج بھی اسے ڈھونڈتا ہوں
Poet: Hukhan
By: Hukhan, karachi

کچھ گمشدہ منزلوں کے نشان ڈھونڈتا ہوں
سر شام ہی سے اجلی صبح کھوجتا ہوں
غموں کے طوفان میں اس کی مسکان ڈھونڈتا ہوں
جلا کے تیز دھوپ میں اب سایہ ڈھونڈتا ہوں
آج بھی ستاروں سے آگے کے جہان ڈھونڈتا ہوں
جو گزر گئی عمر وفا آج بھی اسے ڈھونڈتا ہوں
نادان ہو آج بھی سایہ بن کے جو کبھی ساتھ تھا اسے ڈھونڈ تا ہوں
جس نے ہمیشہ بوجھ جانا ہمیں اسکی نظر کرم ڈھونڈتا ہوں
ہاں میں ہوں نادان دیکھو کسے ڈھونڈتا ہوں

Rate it: Views: 8 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 24 Sep, 2018
About the Author: Hukhan

Visit 435 Other Poetries by Hukhan »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
so touchy
By: khalid, karachi on Sep, 27 2018
Reply Reply to this Comment
thx
By: hukhan, karachi on Sep, 28 2018
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.