کیوں ہر کسی پر اعتبار ہم کرنے لگتے ہیں

Poet: محمد یوسف راہی
By: محمد یوسف راهی, Karachi

کیوں ہر کسی پر اعتبار ہم کرنے لگتے ہیں
اور ہر کسی کو اپنا ہم سمجھنے لگتے ہیں

کسی کی ایک مسکراہٹ پر نہ جانے کیوں
دل کے سارے راز بس ہم کھولنے لگتے ہیں

اعتبار کے قابل کہاں ہیں اس دور کے لوگ
بھروسہ کرو تو بھروسہ بھی توڑنے لگتے ہیں

پہلے تو جان بھی لٹا دیتے تھے ایک بھروسے پر
اب دیکھتے ہی لوگ جان چهڑانے لگتے ہیں

ہم تو ٹهرے سیدھے سادے بھولے بھالے لوگ
ہر ایک کی باتوں میں جلد ہی آنے لگتے ہیں

بھروسے اور اعتبار کی بڑی اہمیت ہے راہی
ان کے بنارشتے بھی سارے دھندلانے لگتے ہیں

Rate it:
30 Sep, 2018

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: محمد یوسف راهی
Visit 34 Other Poetries by محمد یوسف راهی »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City