پھر ملاقات کی جیسے کہ یہ رشتہ کیا ہے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

پھر ملاقات کی جیسے کہ یہ رشتہ کیا ہے
دل میں یوں آن بسا، دید کی کہتا کیا ہے

شوخیاں بھول گئے عمر کے ڈھلتے ڈھلتے
آنکھ میں ناچتی معصوم میں رکھا کیا ہے

سب سے مشکل سا لگا، جان کے، عورت ہونا
کچھ بھی پانے کو نہیں، ہے جو ا پنا کیا ہے

زخم اندر ہو یا باہر یہ دکھا سکتی نہیں
عیب تو دور کہیں جسم چھپا کیا ہے

کچھ ہیں باتیں جو اسے سہنا پڑا کرتی ہیں
غیر تو غیر ہیں شوہر سا اچھا کیا ہے

ان کے ایوانوں میں جب بات کرو عورت کی
بات پکڑو جو کہیں بات گھما یا کیا ہے

کوئی انصاف ملے گا اسے اس دنیا میں
کب کہاں جائے ہے اب وشمہ کیا ہے

Rate it:
01 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City