اس تتلیوں کے دیس سے ،آوارگی سے میں

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

اس تتلیوں کے دیس سے ،آوارگی سے میں
کرتی ہوں پیار آج بھی خوشبو، کلی سے میں

ہجرت کا میرے دوستو سوچا نہیں کبھی
بس مطمئن ہوں درد کی اپنی گلی سے میں

جب موت کی سچائی کو تسلیم کر لیا
پھر دور دور ہی رہی ہوں زندگی سے میں

ہر شعر ہے یہ دوستو پیغامِ زندگی
کہتی ہوں دل کی بات بھی تو شاعری سے میں

ہوں مرکزِ نگاہ مگر پھر بھی دیکھئے
"جاناں بہت اداس ہوں اپنی کمی سے میں"

یہ عشق کا غبار ہے چہرے پہ جم چکا
کیسے قدم ہٹاؤں رہِ عاشقی سے میں

وہ ہے حصارِ ذات میں محصور اس لئے
وشمہ کروں گی بات ابھی سادگی سے میں

Rate it:
02 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City