بلبل کی عنایت ہے جو یہ رنگِ چمن ہے

Poet: Zeeshan Lashari
By: Zeeshan Lashari, Kunri

بلبل کی عنایت ہے جو یہ رنگِ چمن ہے
قربان لہو کر کے جو گلشن میں دفن ہے

کچھ ظلم ہوا ہم پہ جو اب ترکِ وفا ہے
اک سوز ہے دل میں بھی جو یہ گرم سخن ہے

لے دے کے فقط دل تھا پسند آیا نہ وہ بھی
کہتے ہیں کہ دل آپ کا خستہ ہے کہن ہے

افکار و خیالات گرفتار ہیں جس میں
اس زلف کا تحفہ ہے جو ماتھے پہ شکن ہے

دوزخ کے گڑھے سے بھی نکل آتے ہیں باہر
پر میں ہوں پڑا جس میں وہ اک چاہِ ذقن ہے

پردہ ہو اگر رخ پہ تو تشبیہیں بہت ہیں
پر ہم یہ سمجھتے ہیں کہ یہ چاند گہن ہے

ہر روز نئے رنج نئے سوز لے آئے
یہ دل ہے مرا یا کوئی ناسورِ بدن ہے

وابستہ تھی اس ایک سے ہر رونقِ محفل
وہ آنکھ نہیں آج تو محفل میں امن ہے

سانسوں کو مری شانؔ معطر کئے جائے
اس تن کی یہ خوشبو ہے کہ یہ مشکِ ختن ہے

Rate it:
03 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Zeeshan Lashari
Visit 16 Other Poetries by Zeeshan Lashari »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City