مہر و وفا میں جان بھی قربان کر گئے

Poet: Zeeshan Lashari
By: Zeeshan Lashari, Kunri

مہر و وفا میں جان بھی قربان کر گئے
عاقل سے ہو سکے نہ جو نادان کر گئے

پرویوں سی ناز لے کے مرے گھر وہ آئے تھے
اک خطہ زمیں کو پرستان کر گئے

مہمان بن کے دو لمحوں کے واسطے
یادوں کو اپنی مستقل مہمان کر گئے

جاتے ہوئے نگاہ جو محفل پہ کر گئے
مہنگی سے مہنگی مے کو بھی ارزان کر گئے

جینے کی وجہ ڈھونڈ رہا تھا یہ دل مرا
مشکل وہ آ کے یہ مری آسان کر گئے

کل شب کو بن سنور کے وہ آئے تھے خواب میں
کافر کے دل کو قائلِ حوران کر گئے

نہ حسن اور زن سے کبھی دشمنی کرو
یوسف کو دونوں داخلِ زندان کر گئے

پردہ اٹھا دیا جو سرِ بزم آپ نے
حوروں سمیت منفعل غلمان کر گئے

یہ حسن اور عشق جو باہم ہوئے کبھی
غالبؔ کے آدمی کو بھی انسان کر گئے

Rate it:
08 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Zeeshan Lashari
Visit 16 Other Poetries by Zeeshan Lashari »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City