دیار خواب میں کوشش ہے پھر نہیں آیا

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

دیار خواب میں کوشش ہے پھر نہیں آیا
بنا رہی ہوں میں تصویر پر نہیں آیا

ابھی تو صرف بگولے اٹھے خیالوں میں
ابھی سے رکنے لگی نبض اثر نہیں آیا

شعاعیں دینے لگے ایسا کے اندھیرے بھی
نئی ادا ہے چراغوں میں بھر نہیں آیا

محاذ میں نے ہی اپنے خلاف کھولا ہے
کہ آ گئی ہے گھڑی خود کا گھر نہیں آیا

ذرا سی ٹھیس سے آنسو نکل پڑے ورنہ
یہ کوئی رسم نہیں ہےادھر نہیں آیا

جنوں کی راہ پہ چلتی ہوں تم کو حیرت ہے
مری خرد کا بھلا کا نظر نہیں آیا

ہر ایک چیز سے غافل رہی ہوں دنیا میں
ترے خیال میں اپنی خبر نہیں آیا

ہے زندگی تو فقط اک عذاب ہی وشمہ
نہ روزگار ہے اور کوئی گھر نہیں آیا

Rate it:
11 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City