وہ آسماں لوگوں کا تماشا جو بنا ہے۔

Poet: #Mehik Yousafzai
By: Mehik Yousafzai, Peshawar

ہر غم سے میدری روح کا رشتہ جو بنا ہے
ہر درد سے ایک خون کا دریا جو بنا ہے

آنکھوں کو بند کر کے یہی خواب آیا تھا
دیکھا تھا کہ لکڑی کا ایک جھونپڑا جو بنا ہے

دھیرے سے وہ جھونپڑی بھی بکھرنے لگی تھی اب
آسمان کا ٹوٹا ہوا تارا جو بنا ہے

گر گر کے جو سنبھال رہی تھی میں وجود کو
اب دیکھ لو وہ ریت کا صحرا جو بنا ہے

اس ریت کو مٹھی بنا کے گھر بنایا تھا
وہ بارش کی ہر بوند سے دریا جو بنا ہے

جس (مہک)نے آسمان کو چھوا تھا بہت بار
وہ آسماں لوگوں کا تماشا جو بنا ہے

Rate it:
12 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Mehik Yousafzai
Visit 4 Other Poetries by Mehik Yousafzai »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City