ابھی تو زخم کچھ بولا نہیں ہے

Poet: Wasim Ahmad Moghal
By: Wasim Ahmad Moghal, lahore

اَبھی سے لگ گئی ہے چُپ سی تم ۔۔کو
اَبھی تو زخم کچھ بولا ۔۔۔۔۔نہیں ہے

ُچنے کیوں جا رہے ہیں۔ اُس کےآنسو
خزانہ تو کوئی رولا ۔۔۔۔۔۔نہیں ہے

فضا میں پھیلتی جاتی ہے ۔۔۔۔خوشبو
اَگرچہ اُس نے منہ کھولا ۔۔نہیں ہے

محبت ہی متاعِ زندگی ۔۔۔۔۔۔ہے
کسی نے بات کو تولا۔۔۔۔نہیں ہے

ترے ہر جھوٹ کو ہم سچ ہی مانیں
زمانہ اِس قدر بھولا ۔۔۔۔نہیں ہے

کہیں کچھ ہو رہا ہے ۔۔۔جانِ جاناں
پرندہ باغ کا بولا ۔۔۔۔۔۔نہیں ہے

پریشاں آپ کیوں کر ہو رہے ۔ہیں
اَبھی اِک راز بھی کھولا۔۔نہیں ہے

غلط ہےاُن کا یوں ۔۔ترکِ تعلق
مگر کوئی شخص بھی بولا ۔۔نہیں ہے

Rate it:
15 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Wasim Ahmad Moghal
Visit Other Poetries by Wasim Ahmad Moghal »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City