اشارہ تو کرے

Poet: Syed Zulfiqar Haider
By: Syed Zulfiqar Haider, Dist. Gujranwala ; Nizwa, Oman

فاصلے سمٹ جایئں گے راستے آسان ہو جائیں گے
وہ پاس آنے کا ہم سے کوئی بہانا تو کرے

ہم کود جائیں گے آگ کے سمندر میں بِن کچھ کہے
ہماری قبر پر آنے کا ہم سے وعدہ تو کرے

اُس کی صورت ہمیشہ کے لئیے آنکھوں میں قید کر لوں
چہرے کی دید دے کر وہ ہم سے تقاضا تو کرے

مسکراہٹ اُس کی دیکھ کر میں چہک سا جاؤں
لبوں پر مُسکرانے کا پیدا سامان تو کرے

اُس کا حصار بن جاؤں زمانے سے چرا لوں
مجھ سے چاہت کا اک بار گمان تو کرے

ہمیشہ اُس کے لبوں کی مسکراہٹ بن کر رہوں گا
رکھ دوں اُس کے قدموں میں سر وہ اشارہ تو کرے
 

Rate it:
15 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Zulfiqar Haider
Visit 50 Other Poetries by Syed Zulfiqar Haider »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City