دوستوں کے روپ میں بڑے دشمن کو بھی دیکھا۔

Poet: #Mehik Yousafzai
By: Mehik Yousafzai, Peshawar

دوستوں کے روپ میں بڑے دشمن کو بھی دیکھا
غریب کے جولی میں ہر ستم کوبھی دیکھا

دعوئ تو کیا تھا کہ تجھے درد نہ دونگا
مرحم لگانے والے کے زخم کو بھی دیکھا

تانہ میری تنہائی کا تو بھی دیا تھا
تنہائی کی آگوش میں مرحم کو بھی دیکھا

اپنوں نے دئے زخم تو غیروں سے کیا گلہ
ہر دوست کے ہاتھوں سے ہر ستم کو بھی دیکھا

نہ پیار سے گلہ نہ میرے عشق سے گلہ
دل میں جو بیٹھ گئے اسنے دھڑکن کو بھی دیکھا

الفاظ یہ نہیں یہ میرے دل کے ہے جذبات
غزلوں کے بکھرتے ہوئے آنگن کو بھی دیکھا

جب گر گئی مہک تو زخم یاد نہ رہا
ہاتھوں میں ٹوٹتے ہوئے کنگن کو بھی دیکھا

Rate it:
17 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Mehik Yousafzai
Visit 4 Other Poetries by Mehik Yousafzai »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City