مجھی سے پوچھ رہا تھا سنا گیا کوئی

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

مجھی سے پوچھ رہا تھا سنا گیا کوئی
بتوں کے شہر میں وہ ہی ہنسا گیا کوئی

خموشیوں کی چٹانوں کو توڑنے کے لیے
کسی کے پاس نہیں تھی جگا گیا کوئی

سمجھ سکی نہ مگر کوئی پتھروں کی زباں
ہر ایک لمحہ لگا وہ دکھا گیا کوئی

یہ بند لب ہیں کہ کوئی کھلی ہوئی سی کتاب
مرے سوال پہ وہ بولتا گیا کوئی

ورق پہ رات کے لکھی ہے صبح کی تحریر
یہ ایک وقت ہے بے رنگ آ گیا کوئی

نہ حرف حرف ہوا عکس گفتگو میرا
سمجھنا چاہو تو وہ ہی رلا گیا کوئی

اک آنسوؤں کا سمندر تھا جل پری کا لباس
ملا تو ایسےکہ غم کو سلا گیا کوئی

ہر ایک ذہن میں اپنے ہی بند ہے وشمہ
فضا کے خول سے باہر ہی پا گیا کوئی

Rate it:
18 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City