تو کدھر جائے

Poet: Syed Zulfiqar Haider
By: Syed Zulfiqar Haider, Gujranwala, Pakistan ; Nizwa, Oman

موج جو ساحل سے ٹکرائے نہیں تو کدھر جائے
آنسو جو پلکوں پر اترائے نہیں تو کدھر جائے

شمع تو مسکراتی رہے پروانے کو جلاتی رہے رات بھر
پروانا اگر موت کی آغوش میں جائے نہیں تو کدھر جائے

مُسکرانا اگرچہ ہر کوئی چاہے صدا عمر بھر
ہجر جو عاشق کو تڑپائے نہیں تو کدھر جائے

عشق کی پیاس مل جائے جشے روح میں اتر جائے
ساغر یار کی پلکوں سے چھلک جائے نہیں تو کدھر جائے

مانا پاس آنے سے جزبات بکھرنے کا اندیشہ ہے تجھے
قربت اگر دوری مٹائے نہیں تو کدھر جائے

نازک سی کلی تیری زلف میں سجنے سے اتراتی ہے
چمن جو تیرے آنے سے اترائے نہیں تو کدھر جائے

بخشتا ہے چند ساعتیں پیار بھری کئی برسوں کے بعد
انتظار زندگی کا جزو بن جائے نہیں تو کدھر جائے
 

Rate it:
20 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Zulfiqar Haider
Visit 50 Other Poetries by Syed Zulfiqar Haider »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

بہت ہی عمدہ

By: سمیرا اسماعیل, Gujrat on Oct, 22 2018

very well said

By: Sumera Ali, Islamabad on Oct, 21 2018

amazing

By: Shakir, Karachi on Oct, 21 2018

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City