اگرچہ جُدائی ہے

Poet: Syed Zulfiqar Haider
By: Syed Zulfiqar Haider, Gujranwala, Pakistan ; Nizwa, Oman

اگرچہ جُدائی ہے درمیان اب کے برس
کیا پھر بھی تم مجھے بھول پاوَ گے

میرے بغیر جینے کی تمہیں عادت ہی نہیں
میرے ساتھ کے بنا تم کیسے جی پاوَ گے

میں تجھے بھول جاوَں یہ ممکن نہیں
تم مجھے بھول جاوَ یہ کیسے کر پاوَ گے

مجھے دیکھتے ہی تیرے چہرے پر خوشی اویزاں ہوتی تھی
میری جُدائی میں بھی کیا وہ حسیں پل دہرا پاوَ گے

جان جاوَ نہ خود نہ مجھے یوں ستاوَ
اشکوں کے طوفان کو کب تک چھپا پاوَ گے

میں خود بھی تجھ بن جینے کا تصور نہیں کر سکتا
ذوالفقار کی جُدائی کا کرب تم کس طرح سہہ پاوَ گے
 

Rate it:
20 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Zulfiqar Haider
Visit 50 Other Poetries by Syed Zulfiqar Haider »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City