ستارے آنسوؤں کی روشنی معلوم ہوتی ہے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

گھٹن میں جی لیاہے بے بسی معلوم ہوتی ہے
ستارے آنسوؤں کی روشنی معلوم ہوتی ہے

ڈسے ہم ہیں، ڈسے تم ہو، مگر دشمن نہیں ملتا
کہیں باہر نہیں یہ دشمنی معلوم ہوتی ہے

کوئی پارس نہیں چھوتا، مگر سونا نکلتا ہے
چلو مل جل کے ہم ہی دوستی معلوم ہوتی ہے

جہاں آدم بنے انساں کہیں ڈھونڈو وہی بھٹی
بنیں ایندھن، وہی یہ زندگی معلوم ہوتی ہے

مجھے پھر سوچنا ہو گا، کہیں ظاہر نہ ہو جائیں
جو اندر کی ہیں سب باتیں خوشی معلوم ہوتی ہے

کسی بھی ایک پلڑے میں جھکاؤ، کس قدر مشکل
سمجھتے سوچتے یہ عاشقی معلوم ہوتی ہے

گزارہ جب بھی قوموں نے کیا وشمہ برائی میں
پڑا رونا، وہی پر بے کسی معلوم ہوتی ہے

Rate it:
23 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City