سنو مجھے شاعر نہ سمجھنا تم

Poet: Sagar Haider Abbasi
By: Sagar Haider Abbasi, Karachi

سنو مجھے شاعر نہ سمجھنا تم
میں وہ درد بھرا شخص ہوں جسے تم نے
برسوں محبت کے فریب میں رکھا
لبوں پہ تمہارے اقرارِ وفا دل میں بغاوت میں باتیں تھیں
ہم سے تو فقط ملتے تھے غیروں پہ آپ کی عنایتیں تھیں
سنو مجھے بھی کبھی شاعری سے الجھن تھی
مگر اب جب لفظوں کو لکھتا ہوں تو یہ احساس ہوتا ہے
کوئی بھی شخص بےسبب شہد کو زہر نہیں لکھتا
میری شاعری کو پڑھ کر کیا تمہارا دل نہیں دکھتا
میری شاعری پڑھ کر تم واہ واہ جو کرتے ہو
کبھی تم نے یہ بھی سوچا ہے کہ اتنا درد لکھنے میں بھی کتنا درد ہوتا ہے
کیسے آنکھیں برستی ہیں کیسے یہ دل تڑپتا ہے
خیر تمہیں میرے غم میرے دکھ میری ذات سے کیا لینا
تمہیں پڑھنے سے مطلب ہے جفا تمہاری فطرت ہے
تمہیں جفا کرنے سے مطلب ہے خیر جو بھی ہو
مگر سنو مجھے شاعر نہ سمجھنا تم
مجھے شاعر نہ سمجھنا تم

Rate it:
25 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sagar haider abbasi
Sagar haider Abbasi
From Karachi Pakistan
.. View More
Visit 216 Other Poetries by sagar haider abbasi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City