اِک عجیب سا درد ہے دل میں سمویا ہوا

Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

اِک عجیب سا درد ہے دل میں سمویا ہوا
کوئی سالوں سے ہے جہاں میں سویا ہوا

برسوں گزر گئے ہیں مجھے مرے ہوئے
روح آج بھی ڈھونڈتی ہے کچھ کھویا ہوا

نامعلوم مجھےٗ وہ کون ہے یا کیا ہے؟
دل کس کے لیے ہے اتنا رویا ہوا

نشیب و فراز میں ٗ مَیں خود ہی ملوث
جبکہ کچھ نہیں یہاں غم میں ڈبویا ہوا

مَیں تن تنہا اور یہ مہکی فضا
یہ سارا عالم جنت سے بھگویا ہوا

یہاں کی دھوپ ٗ چمکتے سونے کا روپ
یہاں کا منظر دودھ سے دھویا ہوا

ہریالیاں ہی ہریالیاں میرے ہر سو مگر
مجھ میں شجر بے کلی کا اِک بویا ہوا

یہ اونچے نیچے تنہا خالی مکانوں کو
میری تلاش نے ہے مسلسل پرویا ہوا

Rate it:
26 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City