ہاتھوں سے اُس کے نام کی لکیریں مٹ گئیں

Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

ہاتھوں سے اُس کے نام کی لکیریں مٹ گئیں
تقدیر تھیں جو میری ٗ وہی تقدیریں مٹ گئیں

کہاں کے اٹوٹ بندھن جو کاغذوں سے جڑتے ہیں
سبھی کچھ مٹ گیا جب تحریریں مٹ گئیں

جس نے کیا نہ کبھی پرے اپنے پیار سے مجھے
مجھ پر سے اُس پیار کی زنجیریں مٹ گئیں

پایا اُس خواب کو اِک عرصۂ حیات تلک
کُھلی جیسے ہی آنکھ ٗ تعبیریں مٹ گئیں

سَو سوچی تھیں ٗ نہ کھوئیں گے اُسے ہم کبھی
وقت نے چھین لیا اُسے ٗ تدبیریں مٹ گئیں

اللہ رے! میری محبت کے ہر موڑ پہ شکوے
جب ٹوٹ گئے سلسلے ٗ سبھی تقصیریں مٹ گئیں

Rate it:
27 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City